بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

کافر ممالک میں بننے والی مصنوعات کے استعمال کا حکم

کافر ممالک میں بننے والی مصنوعات کے استعمال کا حکم

سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیان ِ کرام مندرجہ ذیل مسئلے کے بارے میں کہ کافر ممالک میں دستیاب کھانے پینے اور دیگر استعمال کی پروڈکٹس میں شامل اشیاء کے متعلق کمپنی نے جو تفصیل بیان کی ہوتی ہے، اس کا اعتبار شرعاً کرسکتے ہیں یا نہیں؟ مثلاً :دودھ کے ڈبے پر یہ لکھا ہوتا ہے کہ اس میں سو فیصد گائے کا دودھ ہے، چپس کے پیکٹ پر یہ لکھا ہوتا ہے کہ اس میں آلو، مرچیں اور ویجیٹیبل وآئل ہے، گوشت نہیں ہے، تو کیا ان تفصیلات پر بھروسہ کرتے ہوئے مسلمان ان چیزوں کو استعمال کرسکتے ہیں یا نہیں؟ برائے مہربانی مفصل جواب عنایت فرمائیں۔

جواب

کافر ممالک میں گوشت کے علاوہ کھانے پینے کی مصنوعات کے بارے میں جب تک اس بات کا یقین یاظن غالب نہ ہو جائے کہ ان میں کوئی حرام چیز ملائی گئی ہے، اس وقت تک ان مصنوعات کا استعمال کرنا درست ہے۔

لیکن گوشت اور اس سے بنائی گئی مصنوعات میں اصل حرمت ہے، لہٰذا جب تک یہ یقین نہ ہو جائے کہ یہ گوشت شرعی طریقہ پر ذبح شدہ حلال جانور کا ہے اس وقت تک اسے استعمال کرنا جائز نہیں۔ فقط واللہ اعلم

 

دارالافتاء جامعہ فاروقیہ کراچی