بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

عید کے دن میت کے گھر پر جمع ہو کر تعزیت کرنے کا حکم

عید کے دن میت کے گھر پر جمع ہو کر تعزیت کرنے کا حکم

سوال

 کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ بعض علاقوں میں کسی گھر میں جب فوتگی ہوتی ہے تو اس کی وفات کے بعد پہلی عید پر میت کے گھر والے عید کے دنوں میں نئے کپڑے نہیں پہنتے او رمیت کے عزیز واقارب اور علاقے کے لوگ اس بنا پر ان کے گھر آتے ہیں کہ یہ مرحوم کی پہلی عید ہے۔

کیا شریعت مطہرہ میں اس کی گنجائش ہے؟ نیز ایسی رسم منانے والوں کے بارے میں شریعت مطہرہ کیا حکم دیتی ہے؟

جواب

 واضح رہے کہ میت کے گھر والوں میں صرف اس کی بیوہ کو چار ماہ دس دن تک سوگ کا حکم ہے، دوسری خواتین کے لیے تین دن تک اس کی اجازت ہے، اس سے زیادہ نہیں، باقی تعزیت تین دن کے بعد درست نہیں، مکروہ ہے اور ایک مرتبہ تعزیت کے بعد دوبارہ تعزیت کرنا بھی صحیح نہیں، لہٰذا عید کے دن میت کے عزیز واقارب کے ہاں تعزیت کی نیت سے جانا اور جمع ہونا جائز نہیں، بلکہ بدعت ہے ،اس سے اجتناب ضروری ہے۔ فقط واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء جامعہ فاروقیہ کراچی