بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

شریعت میں اشعار پڑھنے کا حکم

شریعت میں اشعار پڑھنے کا حکم

سوال

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ اشعار پڑھنا گناہ ہے یا نہیں؟ جس طرح کے اشعار بھی ہوں، اچھے یا برے واضح فرما دیں۔

جواب

اشعار کا دار ومدار اشعار کے مضمون پر ہے، اگر مضمون مندرجہ ذیل چیزوں سے پاک ہو تو اشعار کہنا جائز ہے، ورنہ نہیں:
اشعار کفریہ یا فسقیہ اور مُخرِّب اخلاق مضمون پر مشتمل نہ ہوں۔
فحش اور نازیبا کلمات سے پاک ہوں۔
عشقیہ اور نفسانی خواہشات کو برانگیختہ کرنے والے اشعار نہ ہوں
بلاوجہ کسی مسلمان یا قبیلہ کی ہجو اور مذمّت نہ کی گئی ہو۔
بلاوجہ مبالغہ نہ ہو۔
اشعار پڑھنے میں اتنا مصروف نہ ہو کہ قرآن وعلم اور دیگر واجبات شرعیہ سے غفلت ہونے لگے۔
البتہ وہ اشعار جو اچھے مضامین ومعانی پر مشتمل ہوں، جیسے حمد باری تعالیٰ ، نعت رسول مقبول صلی الله علیہ وسلم، مدح اصحاب رسول علیہ الصلاة والسلام، ایسے اشعار کا پڑھنا جائز ہی نہیں، بلکہ ان پر اجروثواب کی بھی امید ہے۔
البتہ یہ واضح رہے کہ ایسے اشعارمیں بھی مبالغہ آرائی نہ ہو، نیز مباح مضامین پر مشتمل اشعار کا پڑھنا مباح ہے۔ فقط واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء جامعہ فاروقیہ کراچی